6

قاضی صاحب اور مولانا صاحب

بُرا نہ منائیے گا۔ کچھ تاریخی حقائق یاد کرانے کی گستاخی کر رہا ہوں۔ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن آج کل کوئی نئی باتیں تو نہیں کر رہے۔

اسلام آباد کی طرف جو لانگ مارچ جماعت اسلامی کے امیر قاضی حسین احمد نے 1996میں کیا تھا ویسا ہی لانگ مارچ مولانا فضل الرحمٰن 2021میں پھر سے کرنا چاہتے ہیں۔ جن اسمبلیوں سے قاضی حسین احمد 2007میں استعفے دینا چاہتے تھے اُنہی اسمبلیوں کو مولانا فضل الرحمٰن 2021میں خالی کرنا چاہتے ہیں۔
راولپنڈی والوں کے بارے میں جو سخت لب و لہجہ قاضی حسین احمد نے 2008میں اختیار کیا مولانا صاحب دھیرے دھیرے اُسی لب و لہجے کی طرف بڑھ رہے ہیں لیکن وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد کی طرف سے مولانا فضل الرحمٰن پر ایسے غصہ دکھایا جا رہا ہے جیسا کہ کوئی پہلی دفعہ اسمبلیوں سے استعفوں اور اسلام آباد یا راولپنڈی کی طرف لانگ مارچ کی دھمکیاں دے رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں