7

بندہ بہت ہوشیار ہے

2011 میں جب اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ نے انہیں میاں نواز شریف اور آصف زرداری کا متبادل بنانےکا فیصلہ کیا تو آغاز لاہور کے مینار پاکستان اور پنڈی کےمشہور زمانہ جلسوں سے کیا گیا۔

ملک کے بڑے بڑے اہل سرمایہ کو کہا گیا کہ وہ نوٹ نچھاور کریں، میڈیا کو بھی ہدایات جاری ہوئیں کہ انہیں مسیحا ثابت کریں، لیکن آپ حیران ہوں گے کہ آصف علی زرداری صاحب بھی اپنی مرضی سے پیسے اور دیگر حوالوں سے پنجاب میں ان کے جلسوں کو سپورٹ کررہے تھے ۔

میں ذاتی طور پر جانتا ہوں کہ انہوں نے اپنے دوستوں سے ان جلسوں کے لیے پیسے دلوائے اور سرکاری سپورٹ بھی فراہم کی، زرداری صاحب کا تجزیہ تھا کہ وہ بھی چونکہ دائیں بازو کے لیڈر ہیں اور مسلم لیگ (ن) بھی دائیں بازو کی جماعت ہے ، اس لیے یہاں وہ مسلم لیگ (ن) کے ووٹ کاٹیں گے لیکن وقت آنے پر انہوں نے پنجاب سے مسلم لیگ (ن) کا نہیں بلکہ پیپلز پارٹی کا جنازہ نکال دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں