7

اِٹ کھڑکّا

تصادم ہو تو پنجابی اسے اِٹ کھڑکّا کہتے ہیں، ایک طرف اپوزیشن اور حکومت کا اِٹ کھڑکّا جاری ہے تو دوسری طرف اتحادیوں اور تحریک انصاف میں بھی اِٹ کھڑکے کا امکان ختم نہیں ہوا اور تو اور وفاقی کابینہ میں پورٹ فولیوز بدلنے سے اندر کی لڑائیاں اور اِٹ کھڑکّا بڑھنے کا اندیشہ دوچندہو گیا ہے۔

وزیراعظم گزشتہ دنوں لاہور میں چوہدری شجاعت حسین کی عیادت کے لیے آئے، مقصد ق لیگ اور تحریک انصاف کے درمیان اِٹ کھڑکے کو ختم کرناتھا، چوہدری پرویز الٰہی اور خان کی ملاقات بڑی مفید رہی۔

وفاقی حکومت اور ق لیگ کے درمیان بڑی غلط فہمیوں کا ازالہ ہوا،مگر اس ملاقات کے بعد وزیر اعلیٰ پنجاب بزدار اور چوہدری پرویز الٰہی میں اِٹ کھڑکے کے حالات پیدا ہوگئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں