5

ایران سے مذاکرات میں ہم سے بھی مشورہ کیا جائے: سعودی وزیر خارجہ

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا ہے کہ سعودی عرب اور خلیجی ریاستوں کو امریکہ اور ایران کے مابین جوہری معاہدے کی بحالی کے لیے ہونے والی کسی بھی بات چیت میں کلیدی کردار ادا کرنا چاہیے۔

نو منتخب امریکی صدر جو بائیڈن نے رواں ہفتے ہی عندیہ دیا ہے کہ وہ اگلے ماہ صدر کی حیثیت سے اقتدار سنبھالنے کے بعد 2015 کے جوہری معاہدے (جے سی پی او اے) میں دوبارہ امریکہ کی واپسی کے لیے اقدامات کریں گے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 2018 میں امریکہ کو یک طرفہ طور پر اس معاہدے سے نکال لیا تھا۔

بحرین میں ’منامہ ڈائیلاگ‘ کے نام سے ہونے والی سکیورٹی کانفرنس سے ہفتے کو اپنے خطاب میں سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا: ’بنیادی طور پر ہم جو توقع کرتے ہیں وہ یہ ہے کہ ہم سے پوری طرح سے مشاورت کی جائے۔ ایران کے ساتھ ہونے والے کسی بھی براہ راست مذاکرات کے حوالے سے ہم سے اور ہمارے علاقائی دوستوں سے صلاح مشورہ کیا جائے۔ کسی ایسے پائیدار معاہدے تک پہنچنے کا واحد راستہ اسی طرح کی مشاورت سے ہی ممکن ہے۔‘

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں